حزیں ہے بیکس و رنجور ہے دل

اختر شیرانی

حزیں ہے بیکس و رنجور ہے دل

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    حزیں ہے بیکس و رنجور ہے دل

    محبت پر مگر مجبور ہے دل

    تمہارے نور سے معمور ہے دل

    عجب کیا ہے کہ رشک طور ہے دل

    تمہارے عشق سے مسرور ہے دل

    ابھی تک مست ہے مخمور ہے دل

    کیا ہے یاد اس یاد جہاں نے

    الٰہی کس قدر مسرور ہے دل

    بہت چاہا نہ جائیں تیرے در پر

    مگر کیا کیجیے مجبور ہے دل

    فقیری میں اسے حاصل ہے شاہی

    تمہارے عشق پر مغرور ہے دل

    ترے جلوے کا ہے جس دن سے مسکن

    جواب جلوہ گاہ طور ہے دل

    دو عالم کو بھلا دیں کیوں نہ اخترؔ

    کہ اس کی یاد سے معمور ہے دل

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Akhtar Shirani (Pg. 218)
    • Author : Akhtar Shirani
    • مطبع : Modern Publishing House, Daryaganj New delhi (1997)
    • اشاعت : 1997

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY