ہوش میں آؤں تو سوچوں ابھی دیکھا کیا ہے

احسان اکبر

ہوش میں آؤں تو سوچوں ابھی دیکھا کیا ہے

احسان اکبر

MORE BY احسان اکبر

    ہوش میں آؤں تو سوچوں ابھی دیکھا کیا ہے

    پھر یہ پوچھوں کہ یہ پردا ہے تو جلوہ کیا ہے

    دونوں آنکھوں میں ہے اک جلوہ تو دو آنکھیں کیوں

    پتلیوں کا یہ تماشا سا وگر نہ کیا ہے

    تو نے پہچان لئے اپنی خدائی کے نقوش

    آئینہ جس نے تعارف یہ کرایا کیا ہے

    زندگی بھر پڑھی تقدیر کی خفیہ تحریر

    لوح مرقد سے پڑھوں آگے کا لکھا کیا ہے

    میں ہوں تخلیق تری سوز کا ہم معنی ہوں

    تو ہے معنی تو ترا لفظ سے رشتہ کیا ہے

    ہر نفس پیٹ کا ایندھن ہے یہاں پر اے فن

    ہے جو حاصل ترا دنیا ہی تو دنیا کیا ہے

    مآخذ:

    • Book: Dariche (Pg. 34)
    • Author: Bashir Saifi
    • مطبع: Shakhsar Publishers (1975)
    • اشاعت: 1975

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites