اک دشت بے اماں کا سفر ہے چلے چلو

وحید اختر

اک دشت بے اماں کا سفر ہے چلے چلو

وحید اختر

MORE BYوحید اختر

    اک دشت بے اماں کا سفر ہے چلے چلو

    رکنے میں جان و دل کا ضرر ہے چلے چلو

    حکام و سارقین کی گو رہگزر ہے گھر

    پھر بھی برائے بیت تو در ہے چلے چلو

    مسجد ہو مدرسہ ہو کہ مجلس کہ مے کدہ

    محفوظ شر سے کچھ ہے تو گھر ہے چلے چلو

    ظلمت ہے یاں بھی واں بھی اندھیرے ہی ہوں تو کیا

    نور اک ورائے حد نظر ہے چلے چلو

    اترا کنار بحر عطش ایک قافلہ

    ختم اس پہ تشنگی کا سفر ہے چلے چلو

    سر تک پہنچ نہ جائے کوئی تیز گام لہر

    یاں خوں کی موج تا بہ کمر ہے چلے چلو

    جاں کے زیاں کا ڈر ہے طلب میں اگر تو ہو

    ترک طلب میں بھی تو خطر ہے چلے چلو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے