اک رات بخت سوں میں رنداں کا سات پایا

قربی ویلوری

اک رات بخت سوں میں رنداں کا سات پایا

قربی ویلوری

MORE BYقربی ویلوری

    اک رات بخت سوں میں رنداں کا سات پایا

    عرفاں کے ملک دیں پر حق سوں برات پایا

    من عرف نفسہ کا انجن لگا کو دیکھا

    ہر چیز ذات حق بن میں بے ثبات پایا

    یو نفس دوں ہوا سوں پکڑے لیا تھا میری

    مرشد کی کفش اٹھائیں اس سوں نجات پایا

    یو قول و فعل میرا مجھ اختیار سوں نیں

    ہت پنج مات کی میں آپس کی ذات پایا

    تسلیم کر اپس کوں اس کی رضا کے اوپر

    محبوب کا اپس پر نت التفات پایا

    جا بت کدے میں دیکھا چشم یگانگی سوں

    حق بن نہیں دسیا گر عزیٰ و لات پایا

    اسم و صفت کا جلوہ اسم و صفت میں دیکھا

    ہر ذات کوں خدا کی میں عین ذات پایا

    قطرہ ہے عین دریا دریا ہے عین قطرہ

    بھی دونوں غیر ہی ہیں نادر یو بات پایا

    ہر شے ہے عین ہر شے بھی شے ہے غیر ہر شے

    مرشد کے لطف سوں میں کیا خوب بات پایا

    مہتاب علم سلگا گل ریز معرفت کے

    کر جہل کو ہوائی خوش شبرات پایا

    روں روں زباں کروں تو اس کی ثنا نہ سر سی

    قربیؔ کرم سوں حق کی کیا خوش نکات پایا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے