اک ترا ہجر دائمی ہے مجھے

تہذیب حافی

اک ترا ہجر دائمی ہے مجھے

تہذیب حافی

MORE BYتہذیب حافی

    اک ترا ہجر دائمی ہے مجھے

    ورنہ ہر چیز عارضی ہے مجھے

    ایک سایہ مرے تعاقب میں

    ایک آواز ڈھونڈتی ہے مجھے

    میری آنکھوں پہ دو مقدس ہاتھ

    یہ اندھیرا بھی روشنی ہے مجھے

    میں سخن میں ہوں اس جگہ کہ جہاں

    سانس لینا بھی شاعری ہے مجھے

    ان پرندوں سے بولنا سیکھا

    پیڑ سے خامشی ملی ہے مجھے

    میں اسے کب کا بھول بھال چکا

    زندگی ہے کہ رو رہی ہے مجھے

    میں کہ کاغذ کی ایک کشتی ہوں

    پہلی بارش ہی آخری ہے مجھے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    تہذیب حافی

    تہذیب حافی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY