اک تو اسے ہر بات میں حد چاہیے میری

آلِ عمر

اک تو اسے ہر بات میں حد چاہیے میری

آلِ عمر

MORE BYآلِ عمر

    اک تو اسے ہر بات میں حد چاہیے میری

    پھر اس پہ محبت بھی اشد چاہیے میری

    پہلے اسے درکار تھی شام اور یہ شانہ

    اب مجھ کو بھلانے میں مدد چاہیے میری

    بو آنے لگی تجھ سے بھی دنیا کی مرے یار

    کچھ روز مجھے صحبت بد چاہیے میری

    کہتی ہے فرشتوں کی طرح ٹوکوں نہ روکوں

    اور آدمی والی بھی سند چاہیے میری

    کیا دن میں ضروری ہے کہ اوروں میں رہو تم

    کیا رات میں بس نیت بد چاہیے میری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے