اس کے کوچے میں مسیحا ہر سحر جاتا رہا

حیدر علی آتش

اس کے کوچے میں مسیحا ہر سحر جاتا رہا

حیدر علی آتش

MORE BYحیدر علی آتش

    اس کے کوچے میں مسیحا ہر سحر جاتا رہا

    بے اجل واں ایک دو ہر رات مر جاتا رہا

    کوئے جاناں میں بھی اب اس کا پتہ ملتا نہیں

    دل مرا گھبرا کے کیا جانے کدھر جاتا رہا

    جانب کہسار جا نکلا جو میں تو کوہ کن

    اپنا تیشہ میرے سر سے مار کر جاتا رہا

    نے کشش معشوق میں پاتا ہوں نے عاشق میں جذب

    کیا بلا آئی محبت کا اثر جاتا رہا

    واہ رے اندھیر بہر روشنیٔ شہر مصر

    دیدۂ یعقوب سے نور نظر جاتا رہا

    نشہ ہی میں یا الٰہی میکشوں کو موت دے

    کیا گہر کی قدر جب آب گہر جاتا رہا

    اک نہ اک مونس کی فرقت کا فلک نے غم دیا

    درد دل پیدا ہوا درد جگر جاتا رہا

    حسن کھو کر آشنا ہم سے ہوا وہ نونہال

    پہنچے تب زیر شجر ہم جب ثمر جاتا رہا

    رنج دنیا سے فراغ ایذا دہندوں کو نہیں

    کب تپ شیرا اتری کس دن درد سر جاتا رہا

    فاتحہ پڑھنے کو آئے قبر آتشؔ پر نہ یار

    دو ہی دن میں پاس الفت اس قدر جاتا رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے