اتنا طلسم یاد کے چقماق میں رہا

اعجاز گل

اتنا طلسم یاد کے چقماق میں رہا

اعجاز گل

MORE BY اعجاز گل

    اتنا طلسم یاد کے چقماق میں رہا

    روشن چراغ دور کسی طاق میں رہا

    مخفی بھی تھا وصال کا وہ باب مختصر

    کچھ دل بھی محو ہجر کے اسباق میں رہا

    صحرا کے اشتراک پہ راضی تھے سب فریق

    محمل کا جو فساد تھا عشاق میں رہا

    مفقود ہو گیا ہے سیاق و سباق سے

    جو حرف عمر سیکڑوں اوراق میں رہا

    میں تھا کہ جس کے واسطے پابند عہد ہجر

    وہ اور ایک ہجر کے میثاق میں رہا

    اطوار اس کے دیکھ کے آتا نہیں یقیں

    انساں سنا گیا ہے کہ آفاق میں رہا

    خفتہ تھے دائیں بائیں کئی مار آستیں

    زہراب کا اثر مرے تریاق میں رہا

    تاریخ نے پسند کیا بھی کسی سبب

    یا بس کہ شاہ وقت تھا اوراق میں رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites