جلتا ہے کوہ طور تو جل جانے دیجئے

سحر اکبرآبادی

جلتا ہے کوہ طور تو جل جانے دیجئے

سحر اکبرآبادی

MORE BYسحر اکبرآبادی

    جلتا ہے کوہ طور تو جل جانے دیجئے

    موسیٰ کی آرزو تو نکل جانے دیجئے

    اچھے نہیں جبیں پہ یہ بل جانے دیجئے

    دل میں بھرا ہے کچھ تو نکل جانے دیجئے

    روئیں گے یاد کر کے بہت ہم کو اہل حسن

    تھوڑی سی دھوپ حسن کی ڈھل جانے دیجئے

    بدلیں اگر نہ آپ تو پھر کوئی غم نہیں

    دنیا بدل گئی تو بدل جانے دیجئے

    دشمن کا جھوٹ آئے گا خود کھل کے سامنے

    فی الحال ان کے غصے کو ٹل جانے دیجئے

    غم شمع کو رہے گا سحر اس کی موت پر

    پروانے کو بھی ساتھ ہی جل جانے دیجئے

    مأخذ :
    • کتاب : اردو غزل کا مغربی دریچہ(یورپ اور امریکہ کی اردو غزل کا پہلا معتبر ترین انتخاب) (Pg. 98)
    • مطبع : کتاب سرائے بیت الحکمت لاہور کا اشاعتی ادارہ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY