جلتی رہنا شمع حیات

سراج لکھنوی

جلتی رہنا شمع حیات

سراج لکھنوی

MORE BYسراج لکھنوی

    جلتی رہنا شمع حیات

    پھر نہ ملے گی ایسی رات

    کہہ تو گئی وہ نیچی نگاہ

    راز ہی رکھنا راز حیات

    ہم کچھ سمجھے وہ کچھ اور

    خاموشی میں بڑھ گئی بات

    کس کو سنائیں پوچھے کون

    آہ نیم شبی کی بات

    روح کے منکر جسم پرست

    سہل نہیں عرفان حیات

    اف یہ دست طلب اور ہم

    سب ہے وقت پڑے کی بات

    دامن سے اب منہ نہ چھپا

    جا بھی چکی اشکوں کی برات

    جس نے نہ پائی اپنی پناہ

    کیا دے گا اوروں کو نجات

    شعر وہی ہے جس میں سراجؔ

    خود تڑپے روح جذبات

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY