جنگل میں کبھی جو گھر بناؤں

ثروت حسین

جنگل میں کبھی جو گھر بناؤں

ثروت حسین

MORE BYثروت حسین

    جنگل میں کبھی جو گھر بناؤں

    اس مور کو ہم شجر بناؤں

    بہتے جاتے ہیں آئینے سب

    میں بھی تو کوئی بھنور بناؤں

    دوری ہے بس ایک فیصلے کی

    پتوار چنوں کہ پر بناؤں

    بہتی ہوئی آگ سے پرندہ

    بانہوں میں سمیٹ کر بناؤں

    گھر سونپ دوں گرد رہ گزر کو

    دہلیز کو ہم سفر بناؤں

    ہو فرصت خواب جو میسر

    اک اور ہی بحر و بر بناؤں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    جنگل میں کبھی جو گھر بناؤں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY