جو دعا تھی وہ بے اثر ٹھہری

جاوید منظر

جو دعا تھی وہ بے اثر ٹھہری

جاوید منظر

MORE BYجاوید منظر

    جو دعا تھی وہ بے اثر ٹھہری

    ہر خوشی اتنی مختصر ٹھہری

    وہ اچانک بچھڑ گئے سب سے

    دل کی دھڑکن بھی اس قدر ٹھہری

    اپنی بستی اجاڑنے والے

    تجھ کو اس بات کی خبر ٹھہری

    حشر برپا کیا جدائی پر

    کس قیامت کی چشم تر ٹھہری

    ہم تو بے حال ہو گئے ہوتے

    شاعری ان کی چارہ گر ٹھہری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY