جو تیرے منہ سے نہ ہو شرمسار آئینہ

مومن خاں مومن

جو تیرے منہ سے نہ ہو شرمسار آئینہ

مومن خاں مومن

MORE BYمومن خاں مومن

    جو تیرے منہ سے نہ ہو شرمسار آئینہ

    تو رخ کرے سوئے آئینہ وار آئینہ

    کہے ہے دیکھ کے رخسار یار آئینہ

    کہ اس صفائی پہ صدقے نثار آئینہ

    سیاہ رو نہ کرے ترک الفت گلفام

    میں بوالہوس کو دکھاؤں ہزار آئینہ

    صفائے دل کی کہاں قدر تیرہ روزی میں

    چراغ صبح ہے شب ہائے تار آئینہ

    سمجھ لیا مگر اس سبز رنگ کو طوطی

    کہ ہے نظارے کا امیدوار آئینہ

    وہ سخت جاں ہوں کہ دکھلائیں گر دم مردن

    تو توڑ دے کمر کوہسار آئینہ

    مقابل اس رخ روشن کے کھل گئی قلعی

    نہ ٹھہرا آگ پہ سیماب وار آئینہ

    سما رہے ہیں مگر تیرے نو بہ نو جلوے

    کہ بن گیا ہے طلسم بہار آئینہ

    شکست رنگ پہ مستی میں ہنستے ہیں ہم بھی

    دکھائیں گے انہیں وقت خمار آئینہ

    مجھے تو کہتے ہو مت دیکھ میری جانب تو

    اور آپ دیکھتے ہو بار بار آئینہ

    بلا ہے منع وفا نور اڑ گیا ناصح

    تو لے کے دیکھ تو رنگ عذار آئینہ

    سمجھ تو مومنؔ اگر ناروا ہو خود بینی

    تو دیکھیں کاہے کو پرہیزگار آئینہ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY