جنوں کے ولولے جب گھٹ گئے دل میں نہاں ہو کر

نظم طبا طبائی

جنوں کے ولولے جب گھٹ گئے دل میں نہاں ہو کر

نظم طبا طبائی

MORE BYنظم طبا طبائی

    جنوں کے ولولے جب گھٹ گئے دل میں نہاں ہو کر

    تو اٹھے ہیں دھواں ہو کر گرے ہیں بجلیاں ہو کر

    کچھ آگے بڑھ چلے سامان راحت لا مکاں ہو کر

    فلک پیچھے رہا جاتا ہے گرد کارواں ہو کر

    کسی دن تو چلے اے آسماں باد مراد ایسی

    کہ اتریں کشتئ مے پر گھٹائیں بادباں ہو کر

    نہ جانے کس بیاباں مرگ نے مٹی نہیں پائی

    بگولے جا رہے ہیں کارواں در کارواں ہو کر

    وفور ضبط سے بیتابیٔ دل بڑھ نہیں سکتی

    گلے تک آ کے رہ جاتے ہیں نالے ہچکیاں ہو کر

    گلو گیر اب تو ایسا انقلاب رنگ عالم ہے

    کہ نغمے نکلے منقار عنادل سے فغاں ہو کر

    جو ہو کر ابر سے مایوس خود سینچے کبھی دہقاں

    جلا دیں کھیت کو پانی کی لہریں بجلیاں ہو کر

    جہاں میں واشد خاطر کے ساماں ہو گئے لاشے

    جگہ راحت کی نا ممکن ہوئی ہے لا مکاں ہو کر

    ہنسے کوئی نہ بجلی کے سوا اس دار ماتم میں

    اگر رہ جائے سارا کھیت کشت زعفراں ہو کر

    الم میں آشیاں کے اس قدر تنکے چنے میں نے

    کہ آخر باعث تسکیں ہوے ہیں آشیاں ہو کر

    گھٹائیں گھر کے کیا کیا حسرت فرہاد پر روئیں

    چمن تک آ گئیں نہریں پہاڑوں سے رواں ہو کر

    دل شیدا نے پایا عشق میں معراج کا رتبہ

    یہاں اکثر بتوں کے ظلم ٹوٹے آسماں ہو کر

    جو ڈرتے ڈرتے دل سے ایک حرف شوق نکلا تھا

    وہ اس کے سامنے آیا زباں پر داستاں ہو کر

    نکل آئے ہیں ہر اقرار میں انکار کے پہلو

    بنا دیتی ہیں حیراں تیری باتیں مکر یاں ہو کر

    نزاکت کا یہ عالم پھول بھی توڑے تو بل کھا کر

    نہ جانے دل مرا کس طرح توڑا پہلواں ہو کر

    تدرو و کبک پر ہنس کر اٹھے خود لڑکھڑاتے ہیں

    سبک کرتے ہیں ان کو پائنچے بار گراں ہو کر

    گلا گھونٹا ہے ضبط غم نے کچھ ایسا کہ مشکل ہے

    کہ نکلے منہ سے آواز شکست دل فغاں ہو کر

    پتہ اندیشۂ سالک نے پایا منزل دل کا

    تو پلٹا لا مکاں سے آسماں در آسماں ہو کر

    ہوئی پھر دیکھیے آ بستن شادی و غم دنیا

    ابھی پیدا ہوئے تھے رنج و راحت تو اماں ہو کر

    جو نکلی ہوگی کوئی آرزو تو یہ بھی نکلے گا

    تمہارا تیر حسرت بن گیا دل میں نہاں ہو کر

    اتر جائے گا تو او آفتاب حسن کوٹھے سے

    گرے گا سایۂ دیوار ہم پر آسماں ہو کر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY