کائنات غم میں ذہن اک خلا ہے

خلیل مامون

کائنات غم میں ذہن اک خلا ہے

خلیل مامون

MORE BYخلیل مامون

    کائنات غم میں ذہن اک خلا ہے

    خواب کا پرندہ جس میں اڑ رہا ہے

    رات کٹ گئی ہے صبح ہو گئی ہے

    دل کو ڈھونڈیئے مت کب کا جل بجھا ہے

    درد کے سہارے کب تلک چلیں گے

    سانس رک رہی ہے فاصلہ بڑا ہے

    اس جگہ پہ سب نے ہاتھ چھوڑ ڈالا

    یہ مقام شاید منزل وفا ہے

    ٹوٹتے بدن میں دل عجیب شے ہے

    رتیلی زمیں میں پھول کھل رہا ہے

    کیوں ہوا نے بدلیں میرے منہ کی باتیں

    میں نے کچھ کہا ہے اس نے کچھ سنا ہے

    تیری کیا یہ حالت ہو گئی ہے مامونؔ

    خود ہی کہہ رہا ہے خود ہی سن رہا ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Sanson Ke Paar (Pg. 261)
    • Author : Khalil Mamoon
    • مطبع : Educational Publishing House, Delhi (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY