کل زندگی کے خواب کی تعبیر مل گئی

بشیر احمد شاد

کل زندگی کے خواب کی تعبیر مل گئی

بشیر احمد شاد

MORE BYبشیر احمد شاد

    کل زندگی کے خواب کی تعبیر مل گئی

    تھی جس کی مجھ کو جستجو وہ ہیر مل گئی

    اپنی دعا پہ تھا مجھے کچھ اس قدر یقین

    مانگی خدا سے جو وہی جاگیر مل گئی

    جو لوگ بے وقار سے پھرتے تھے شہر میں

    میرے سبب سے ان کو بھی توقیر مل گئی

    برسیں وفا کے چاند کی کرنیں کچھ اس طرح

    بے نور آنگنوں کو بھی تنویر مل گئی

    قرطاس زندگانی پہ دیکھا جو غور سے

    تجھ جیسی ہو بہ ہو کوئی تصویر مل گئی

    ہاتھوں کی الٹی سیدھی لکیروں کو دیکھ کر

    وہ شوخ کہہ رہا تھا کہ تحریر مل گئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY