کر گیا میرے دل و جاں کو معطر کوئی

بشیر فاروقی

کر گیا میرے دل و جاں کو معطر کوئی

بشیر فاروقی

MORE BYبشیر فاروقی

    کر گیا میرے دل و جاں کو معطر کوئی

    چھو کے اس طرح سے گزرا مجھے اکثر کوئی

    جتنی نظریں تھیں اسی شخص میں الجھی ہوئی تھیں

    جا رہا تھا سر بازار سنبھل کر کوئی

    کون سا حادثہ گزرا نہیں اس پر اس بار

    اور وہ ہے کہ شکایت نہیں لب پر کوئی

    دل کو دل ان کی نگاہوں نے بنایا ورنہ

    ایسا بے درد تھا دل جیسے کہ پتھر کوئی

    چاند تاروں پہ نظر ٹھہرے تو یوں لگتا ہے

    تیرے جیسا ہے پس پردۂ منظر کوئی

    وقت ٹھہرا ہوا لگتا تھا سر رہ گزر

    اس طرح دیکھ رہا تھا مجھے مڑ کر کوئی

    حسن شیریں میں بھی تھا حسن تو عذرا میں بھی تھا

    نہ ہوا میرے طرحدار کا ہمسر کوئی

    آئنہ اپنے مقدر پہ نہ کیوں ناز کرے

    مڑ کے اک بار اسے دیکھے جو سنور کر کوئی

    کتنے طوفان چھپے ہیں تہہ ہر موج بشیرؔ

    آج کا دور ہے یا جیسے سمندر کوئی

    مأخذ :
    • کتاب : Dairon ke darmiyan (Pg. 39)
    • Author : Bashiir Faruqi
    • مطبع : Bashiir Faruqi (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY