کھڑکی میں ایک نار جو محو خیال ہے

تاج سعید

کھڑکی میں ایک نار جو محو خیال ہے

تاج سعید

MORE BYتاج سعید

    کھڑکی میں ایک نار جو محو خیال ہے

    شاید کسی کے پیار کو پانے کی چال ہے

    کمرے کی چیز چیز پہ ہے حسرتوں کی گرد

    آنگن میں اجلی دھوپ کا پھیلا جمال ہے

    الفاظ کے گہر تری خاطر پرو لیے

    یہ بھی تو تیرے حسن طلب کا کمال ہے

    اظہار عشق کرتا ہے اب راہ چلتے بھی

    اس عہد کا جواں بڑا روشن خیال ہے

    برسوں کے یار کب کے جدا ہو گئے سعیدؔ

    اس شہر میں ضرور مروت کا کال ہے

    مأخذ :
    • کتاب : auraq salnama magazines (Pg. 523)
    • Author : Wazir Agha,Arif Abdul Mateen
    • مطبع : Daftar Mahnama Auraq Lahore (1967 )
    • اشاعت : 1967

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے