کس کے آنگن سے گزر کر یہ ہوا آتی ہے

ماہر عبدالحی

کس کے آنگن سے گزر کر یہ ہوا آتی ہے

ماہر عبدالحی

MORE BYماہر عبدالحی

    کس کے آنگن سے گزر کر یہ ہوا آتی ہے

    سسکیاں لیتی ہوئی بوئے حنا آتی ہے

    کیا کمی ہے کہ نگاہوں سے گرے جاتے ہو

    دل میں گھر کرنے کی تم کو تو ادا آتی ہے

    دل کی باتیں مجھے کہنی نہیں آتیں لیکن

    یہی کیا کم ہے تری حمد و ثنا آتی ہے

    کھا رہی ہے تن بیمار کو اندر اندر

    کس مسیحا کی دکاں سے یہ دوا آتی ہے

    کس جگہ رک کے ذرا دیر کو دم لے کوئی

    کہیں سایہ ہے شجر کا نہ سر آتی ہے

    اب بہر گام بڑھی جاتی ہے تکلیف سفر

    اب مسافر کو بہت یاد خدا آتی ہے

    مدتوں سنگ مصیبت کی رگڑ کھاتا ہے

    تب کہیں آئینۂ دل میں جلا آتی ہے

    ایک حمام میں گویا کہ سبھی ننگے ہیں

    شرم آتی ہے نہ دنیا کو حیا آتی ہے

    اب تو اس کار گہہ شیشہ گری میں ماہرؔ

    ہر نفس تازہ چھناکے کی صدا آتی ہے

    مآخذ
    • کتاب : Hari Sonahri Khak (Ghazal) (Pg. 61)
    • Author : Mahir Abdul Hayee
    • مطبع : Bazme-e-Urdu,Mau (2008)
    • اشاعت : 2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY