کسی کے ایک اشارے میں کس کو کیا نہ ملا

فانی بدایونی

کسی کے ایک اشارے میں کس کو کیا نہ ملا

فانی بدایونی

MORE BYفانی بدایونی

    کسی کے ایک اشارے میں کس کو کیا نہ ملا

    بشر کو زیست ملی موت کو بہانہ ملا

    مذاق تلخ پسندی نہ پوچھ اس دل کا

    بغیر مرگ جسے زیست کا مزا نہ ملا

    دبی زباں سے مرا حال چارہ ساز نہ کہہ

    بس اب تو زہر ہی دے زہر میں دوا نہ ملا

    خدا کی دین نہیں ظرف خلق پر موقوف

    یہ دل بھی کیا ہے جسے درد کا خزانہ ملا

    دعا گدائے اثر ہے گدا پہ تکیہ نہ کر

    کہ اعتماد اثر کیا ملا ملا نہ ملا

    ظہور جلوہ کو ہے ایک زندگی درکار

    کوئی اجل کی طرح دیر آشنا نہ ملا

    تلاش خضر میں ہوں رو شناس خضر نہیں

    مجھے یہ دل سے گلہ ہے کہ رہنما نہ ملا

    نشان مہر ہے ہر ذرہ ظرف مہر نہیں

    خدا کہاں نہ ملا اور کہیں خدا نہ ملا

    مری حیات ہے محروم مدعائے حیات

    وہ رہ گزر ہوں جسے کوئی نقش پا نہ ملا

    وہ نامراد اجل بزم یاس میں بھی نہیں

    یہاں بھی فانیؔ آوارہ کا پتا نہ ملا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کسی کے ایک اشارے میں کس کو کیا نہ ملا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY