کوئی میرا امام تھا ہی نہیں

عمران عامی

کوئی میرا امام تھا ہی نہیں

عمران عامی

MORE BYعمران عامی

    کوئی میرا امام تھا ہی نہیں

    میں کسی کا غلام تھا ہی نہیں

    تم کہاں سے یہ بت اٹھا لائے

    اس کہانی میں رام تھا ہی نہیں

    جس قدر شور آب و گل تھا یہاں

    اس قدر اہتمام تھا ہی نہیں

    اس لیے سادھ لی تھی چپ میں نے

    اس سے بہتر کلام تھا ہی نہیں

    ہم نے اس وقت بھی محبت کی

    جب محبت کا نام تھا ہی نہیں

    تو کہاں راستے میں آ گئی ہے

    زندگی تجھ سے کام تھا ہی نہیں

    وقت نے لا کھڑا کیا اس جا

    جو ہمارا مقام تھا ہی نہیں

    اس لیے خاص کر دیا گیا عشق

    عام لوگوں کا کام تھا ہی نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY