کچھ لہو تو فروزاں ہمارا بھی ہے

محشر بدایونی

کچھ لہو تو فروزاں ہمارا بھی ہے

محشر بدایونی

MORE BY محشر بدایونی

    کچھ لہو تو فروزاں ہمارا بھی ہے

    شہر پر اتنا احساں ہمارا بھی ہے

    دیکھنا بخیۂ جامۂ وقت میں

    ایک تار گریباں ہمارا بھی ہے

    حق بیانوں کی خاطر ہے وسعت بڑی

    کچھ یہی خواب زنداں ہمارا بھی ہے

    وہ جو فرد وفا میں قلم زد ہوئے

    نام ان میں نمایاں ہمارا بھی ہے

    ہر کڑے وقت سے سہل گزرے مگر

    ان دنوں دل پریشاں ہمارا بھی ہے

    کچھ تو ڈھب ہو کہ اب اپنی نسلیں کہیں

    یہ دیار بزرگاں ہمارا بھی ہے

    جب سے جاگا ہے غزلوں میں شہر نوا

    رتبہ داں ہر سخنداں ہمارا بھی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY