کیا کیا نہ تیرے صدمہ سے باد خزاں گرا

شیخ علی بخش بیمار

کیا کیا نہ تیرے صدمہ سے باد خزاں گرا

شیخ علی بخش بیمار

MORE BYشیخ علی بخش بیمار

    کیا کیا نہ تیرے صدمے سے باد خزاں گرا

    گل برگ سرو فاختہ کا آشیاں گرا

    لکھنے لگی قضا جو ہماری فتادگی

    سو بار ہاتھ سے قلم دو زباں گرا

    جب پہنچے ہم کنارۂ مقصود کے قریب

    تب ناخدا جہاں سے اٹھا بادباں گرا

    موباف سرخ چوٹی سے کیا ان کی کھل پڑا

    ایک صاعقہ سا دل پہ مرے ناگہاں گرا

    تا آسماں پہنچ کے ہوئی آہ سرنگوں

    یا رب ہو خیر فوج الم کا نشاں گرا

    اٹھ کر چلا جو پاس سے ان کے تو گھر تلک

    ہر ہر قدم پہ ضعف سے میں ناتواں گرا

    دیکھا جو دشت نجد میں حال تباہ قیس

    محمل سے لیلیٰ کود پڑی سارباں گرا

    دوزخ پہ کیوں نہ ہو دل بیمارؔ طعنہ زن

    آتش سے عشق کی ہے پتنگا یہاں گرا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY