لبریز حقیقت گو افسانۂ موسیٰ ہے

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

لبریز حقیقت گو افسانۂ موسیٰ ہے

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    لبریز حقیقت گو افسانۂ موسیٰ ہے

    اے حسن حجاب آرا کس نے تجھے دیکھا ہے

    محفل سی سجائی ہے دیدار کی حسرت نے

    ہر چند ترا جلوہ محبوب تماشا ہے

    مٹتا ہے کبھی دل سے نقش اس کی محبت کا

    ناکام تمنا بھی مجبور تمنا ہے

    جذبات کی دنیا میں برپا ہے قیامت سی

    اس حال میں رو پوشی کیا آپ کو زیبا ہے

    ساقی تری محفل کو رنگین کیا جس نے

    وہ خون ہے تقوے کا یا جلوۂ مینا ہے

    اک شیوہ تغافل ہے اک عشوہ تجاہل ہے

    غصہ ہے بجا تیرا شکوہ مرا بے جا ہے

    یہ بے دلی اچھی ہے دیوانہ نہ بن وحشتؔ

    انجام تمنا کا حسرت کے سوا کیا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY