میں ہو کے ترے غم سے ناشاد بہت رویا

تاباں عبد الحی

میں ہو کے ترے غم سے ناشاد بہت رویا

تاباں عبد الحی

MORE BYتاباں عبد الحی

    میں ہو کے ترے غم سے ناشاد بہت رویا

    راتوں کے تئیں کر کے فریاد بہت رویا

    حسرت میں دیا جی کو محنت کی نہ ہوئی راحت

    میں حال ترا سن کر فرہاد بہت رویا

    گلشن سے وہ جوں لایا بلبل نے دیا جی کو

    قسمت کے اوپر اپنی صیاد بہت رویا

    نشتر تو لگاتا تھا پر خوں نہ نکلتا تھا

    کر فصد مری آخر فصاد بہت رویا

    کر قتل مجھے ان نے عالم میں بہت ڈھونڈا

    جب مجھ سا نہ کوئی پایا جلاد بہت رویا

    جب یار مرا بگڑا خط آئے سے اے تاباںؔ

    تب حسن کو میں اس کے کر یاد بہت رویا

    مأخذ :
    • Deewan-e-Taban Rekhta Website)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY