میں سیکھتا رہا اک عمر ہاؤ ہو کرنا

اشفاق ناصر

میں سیکھتا رہا اک عمر ہاؤ ہو کرنا

اشفاق ناصر

MORE BYاشفاق ناصر

    میں سیکھتا رہا اک عمر ہاؤ ہو کرنا

    یوں ہی نہیں مجھے آیا یہ گفتگو کرنا

    ابھی طلب نے جھمیلوں میں ڈال رکھا ہے

    ابھی تو سیکھنا ہے تیری آرزو کرنا

    ہمیں چراغوں سے ڈر کر یہ رات بیت گئی

    ہمارا ذکر سر شام کو بہ کو کرنا

    بھلا یہ کس نے کہا تھا حیات بخش ہے یہ عشق

    کبھی ملے تو اسے مرے رو بہ رو کرنا

    کسے خبر کسے ملتا ہے لمس فکر رسا

    خیال یار کے ذمے ہے جستجو کرنا

    مجھے بھی رنج ہے مرجھا گئے وہ پھول سے لوگ

    بتا رہا ہے مرا ذکر رنگ و بو کرنا

    سکوت شب نے سکھایا تھا مجھ کو آخر شب

    بلا کا شور ہو جب خامشی رفو کرنا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے