میرے ہونے کا تماشا نہیں ہونے دیتا

اکرام اللہ خان اظہر

میرے ہونے کا تماشا نہیں ہونے دیتا

اکرام اللہ خان اظہر

MORE BYاکرام اللہ خان اظہر

    میرے ہونے کا تماشا نہیں ہونے دیتا

    ظرف دھیما مرا لہجہ نہیں ہونے دیتا

    جھیل کی طرح مجھے قید کیا ہے اس نے

    میرے جذبات کو دریا نہیں ہونے دیتا

    استعانت وہ بہرحال کیا کرتا ہے

    میرا مالک مجھے رسوا نہیں ہونے دیتا

    میری عادت ہے کہ پوشیدہ مدد کرتا ہوں

    اپنے ہمسائے کو رسوا نہیں ہونے دیتا

    نت نئے درد دیا کرتا ہے دلبر مجھ کو

    غم دنیا کو اکیلا نہیں ہونے دیتا

    جس کو پالا کہ بڑھاپے کی بنے گا لاٹھی

    خود کا بیٹا یہ سہارا نہیں ہونے دیتا

    ڈال دیتا ہے وہ رشتوں میں دراڑیں اظہرؔ

    بھائیوں کو کبھی یکجا نہیں ہونے دیتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY