مل بھی جاتا جو کہیں آب بقا کیا کرتے

تنویر احمد علوی

مل بھی جاتا جو کہیں آب بقا کیا کرتے

تنویر احمد علوی

MORE BYتنویر احمد علوی

    دلچسپ معلومات

    (12 ؍جولائی1992 ء )

    مل بھی جاتا جو کہیں آب بقا کیا کرتے

    زندگی خود بھی تھی جینے کی سزا کیا کرتے

    سرحدیں وہ نہ سہی اپنی حدوں سے باہر

    جو بھی ممکن تھا کیا اس کے سوا کیا کرتے

    ہم سرابوں میں سدا پھول کھلاتے گزرے

    یہ بھی تھا آبلہ پائی کا صلا کیا کرتے

    جس کو موہوم لکیروں کا مرقع کہیے

    لوح دل پر تھا یہی نقش وفا کیا کرتے

    اب وہ شالوں کا قفس ہو کہ لہو کی خوشبو

    دل پہ لہراتی رہی برق ادا کیا کرتے

    مانگنے کو تو یہاں اپنے سوا کچھ بھی نہ تھا

    لب پہ آتا بھی اگر حرف دعا کیا کرتے

    ہم کو خود عرض تمنا کا سلیقہ بھی نہ تھا

    وہ بھی تنویرؔ بھلا عذر جفا کیا کرتے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے