مری زندگی بھی تو ہے مرا مدعا بھی تو ہے

رام کرشن مضطر

مری زندگی بھی تو ہے مرا مدعا بھی تو ہے

رام کرشن مضطر

MORE BYرام کرشن مضطر

    مری زندگی بھی تو ہے مرا مدعا بھی تو ہے

    میں تجھی کو چاہتا ہوں تو ہی میری آرزو ہے

    کسے ڈھونڈھتی ہیں ہر سو مری بے قرار نظریں

    تو یہ خوب جانتا ہے مجھے کس کی جستجو ہے

    مری چشم حسن ہی میں ترے رخ کی تابشیں ہیں

    مرے حلقۂ نظر میں تری زلف مشک بو ہے

    جو کرم پہ تم ہو مائل تو یہ شان ہے تمہاری

    نہ سوال کیوں کروں میں کہ سوال میری خو ہے

    مری روح خوش ہے مضطرؔ کہ مری طلب ہے صادق

    جو نظر سے چھپ رہا تھا وہی آج روبرو ہے

    مآخذ :
    • Raqs-e-bahar

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY