غم سے کہیں نجات ملے چین پائیں ہم

داغؔ دہلوی

غم سے کہیں نجات ملے چین پائیں ہم

داغؔ دہلوی

MORE BYداغؔ دہلوی

    غم سے کہیں نجات ملے چین پائیں ہم

    دل خون میں نہائے تو گنگا نہائیں ہم

    جنت میں جائیں ہم کہ جہنم میں جائیں ہم

    مل جائے تو کہیں نہ کہیں تجھ کو پائیں ہم

    جوف فلک میں خاک بھی لذت نہیں رہی

    جی چاہتا ہے تیری جفائیں اٹھائیں ہم

    ڈر ہے نہ بھول جائے وہ سفاک روز حشر

    دنیا میں لکھتے جاتے ہیں اپنی خطائیں ہم

    ممکن ہے یہ کہ وعدے پر اپنے وہ آ بھی جائے

    مشکل یہ ہے کہ آپ میں اس وقت آئیں ہم

    ناراض ہو خدا تو کریں بندگی سے خوش

    معشوق روٹھ جائے تو کیونکر منائیں ہم

    سر دوستوں کا کاٹ کے رکھتے ہیں سامنے

    غیروں سے پوچھتے ہیں قسم کس کی کھائیں ہم

    کتنا ترا مزاج خوشامد پسند ہے

    کب تک کریں خدا کے لیے التجائیں ہم

    لالچ عبث ہے دل کا تمہیں وقت واپسیں

    یہ مال وہ نہیں کہ جسے چھوڑ جائیں ہم

    سونپا تمہیں خدا کو چلے ہم تو نا مراد

    کچھ پڑھ کے بخشنا جو کبھی یاد آئیں ہم

    سوز دروں سے اپنے شرر بن گئے ہیں اشک

    کیوں آہ سرد کو نہ پتنگے لگائیں ہم

    یہ جان تم نہ لو گے اگر آپ جائے گی

    اس بے وفا کی خیر کہاں تک منائیں ہم

    ہم سایے جاگتے رہے نالوں سے رات بھر

    سوئے ہوئے نصیب کو کیونکر جگائیں ہم

    جلوہ دکھا رہا ہے وہ آئینۂ جمال

    آتی ہے ہم کو شرم کہ کیا منہ دکھائیں ہم

    مانو کہا جفا نہ کرو تم وفا کے بعد

    ایسا نہ ہو کہ پھیر لیں الٹی دعائیں ہم

    دشمن سے ملتے جلتے ہیں خاطر سے دوستی

    کیا فائدہ جو دوست کو دشمن بنائیں ہم

    تو بھولنے کی چیز نہیں خوب یاد رکھ

    اے داغؔ کس طرح تجھے دل سے بھلائیں ہم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY