تم آئینہ ہی نہ ہر بار دیکھتے جاؤ

داغؔ دہلوی

تم آئینہ ہی نہ ہر بار دیکھتے جاؤ

داغؔ دہلوی

MORE BYداغؔ دہلوی

    تم آئینہ ہی نہ ہر بار دیکھتے جاؤ

    مری طرف بھی تو سرکار دیکھتے جاؤ

    نہ جاؤ حال دل زار دیکھتے جاؤ

    کہ جی نہ چاہے تو ناچار دیکھتے جاؤ

    بہار عمر میں باغ جہاں کی سیر کرو

    کھلا ہوا ہے یہ گلزار دیکھتے جاؤ

    یہی تو چشم حقیقت نگر کا سرمہ ہے

    نزاع کافر و دیں دار دیکھتے جاؤ

    اٹھاؤ آنکھ نہ شرماؤ یہ تو محفل ہے

    غضب سے جانب اغیار دیکھتے جاؤ

    نہیں ہے جنس وفا کی تمہیں جو قدر نہ ہو

    بنیں گے کتنے خریدار دیکھتے جاؤ

    تمہیں غرض جو کرو رحم پائمالوں پر

    تم اپنی شوخیٔ رفتار دیکھتے جاؤ

    قسم بھی کھائی تھی قرآن بھی اٹھایا تھا

    پھر آج ہے وہی انکار دیکھتے جاؤ

    یہ شامت آئی کہ اس کی گلی میں دل نے کہا

    کھلا ہے روزن دیوار دیکھتے جاؤ

    ہوا ہے کیا ابھی ہنگامہ اور کچھ ہوگا

    فغاں میں حشر کے آثار دیکھتے جاؤ

    شب وصال عدو کی یہی نشانی ہے

    نشان بوسۂ رخسار دیکھتے جاؤ

    تمہاری آنکھ مرے دل سے لے سبب بے وجہ

    ہوئی ہے لڑنے کو تیار دیکھتے جاؤ

    ادھر کو آ ہی گئے اب تو حضرت زاہد

    یہیں ہے خانۂ خمار دیکھتے جاؤ

    رقیب برسر پرخاش ہم سے ہوتا ہے

    بڑھے گی مفت میں تکرار دیکھتے جاؤ

    نہیں ہیں جرم محبت میں سب کے سب ملزم

    خطا معاف خطاوار دیکھتے جاؤ

    دکھا رہی ہے تماشا فلک کی نیرنگی

    نیا ہے شعبدہ ہر بار دیکھتے جاؤ

    بنا دیا مری چاہت نے غیرت یوسف

    تم اپنی گرمئ بازار دیکھتے جاؤ

    نہ جاؤ بند کئے آنکھ رہروان عدم

    ادھر ادھر بھی خبردار دیکھتے جاؤ

    سنی سنائی پہ ہرگز کبھی عمل نہ کرو

    ہمارے حال کے اخبار دیکھتے جاؤ

    کوئی نہ کوئی ہر اک شیر میں ہے بات ضرور

    جناب داغؔ کے اشعار دیکھتے جاؤ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY