بھولی بسری یادوں کی بارات نہیں آئی

شہریار

بھولی بسری یادوں کی بارات نہیں آئی

شہریار

MORE BY شہریار

    بھولی بسری یادوں کی بارات نہیں آئی

    اک مدت سے ہجر کی لمبی رات نہیں آئی

    آتی تھی جو روز گلی کے سونے نکڑ تک

    آج ہوا کیا وہ پرچھائیں سات نہیں آئی

    مجھ کو تعاقب میں لے آئی اک انجان جگہ

    خوشبو تو خوشبو تھی میرے ہات نہیں آئی

    اس دنیا سے ان کا رشتہ آدھا ادھورا ہے

    جن لوگوں تک خوابوں کی سوغات نہیں آئی

    اوپر والے کی من مانی کھلنے لگی ہے اب

    مینہ برسا دو چار دفعہ برسات نہیں آئی

    مآخذ:

    • Book: sooraj ko nikalta dekhoon (Pg. 674)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites