دل پریشاں ہو مگر آنکھ میں حیرانی نہ ہو

شہریار

دل پریشاں ہو مگر آنکھ میں حیرانی نہ ہو

شہریار

MORE BY شہریار

    دل پریشاں ہو مگر آنکھ میں حیرانی نہ ہو

    خواب دیکھو کہ حقیقت سے پشیمانی نہ ہو

    کیا ہوا اہل جنوں کو کہ دعا مانگتے ہیں

    شہر میں شور نہ ہو دشت میں ویرانی نہ ہو

    ڈھونڈتے ڈھونڈتے سب تھک گئے لیکن نہ ملا

    اک افق ایسا کہ جو دھند کا زندانی نہ ہو

    غم کی دولت بڑی مشکل سے ملا کرتی ہے

    سونپ دو ہم کو اگر تم سے نگہبانی نہ ہو

    نفرتوں کا وہی ملبوس پہن لو پھر سے

    عین ممکن ہے یہ دنیا تمہیں پہچانی نہ ہو

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دل پریشاں ہو مگر آنکھ میں حیرانی نہ ہو نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY