موم کے جسموں والی اس مخلوق کو رسوا مت کرنا

شہریار

موم کے جسموں والی اس مخلوق کو رسوا مت کرنا

شہریار

MORE BY شہریار

    موم کے جسموں والی اس مخلوق کو رسوا مت کرنا

    مشعل جاں کو روشن کرنا لیکن اتنا مت کرنا

    حق گوئی اور وہ بھی اتنی جینا دوبھر ہو جائے

    جیسا کچھ ہم کرتے رہے ہیں تم سب ویسا مت کرنا

    پچھلے سفر میں جو کچھ بیتا بیت گیا یارو لیکن

    اگلا سفر جب بھی تم کرنا دیکھو تنہا مت کرنا

    بھوک سے رشتہ ٹوٹ گیا تو ہم بے حس ہو جائیں گے

    اب کے جب بھی قحط پڑے تو فصلیں پیدا مت کرنا

    اے یادو جینے دو ہم کو بس اتنا احسان کرو

    دھوپ کے دشت میں جب ہم نکلیں ہم پر سایا مت کرنا

    مآخذ:

    • Book: sooraj ko nikalta dekhoon (Pg. 252)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites