تیرے سوا بھی کوئی مجھے یاد آنے والا تھا

شہریار

تیرے سوا بھی کوئی مجھے یاد آنے والا تھا

شہریار

MORE BY شہریار

    تیرے سوا بھی کوئی مجھے یاد آنے والا تھا

    میں ورنہ یوں ہجر سے کب گھبرانے والا تھا

    جان بوجھ کر سمجھ کر میں نے بھلا دیا

    ہر وہ قصہ جو دل کو بہلانے والا تھا

    مجھ کو ندامت بس اس پر ہے لوگ بہت خوش ہیں

    اس لمحے کو کھو کر جو پچھتانے والا تھا

    یہ تو خیر ہوئی دریا نے رخ تبدیل کیا

    میرا شہر بھی اس کی زد میں آنے والا تھا

    اک اک کر کے سب رستے کتنے سنسان ہوئے

    یاد آیا میں لمبے سفر پر جانے والا تھا

    مآخذ:

    • Book: sooraj ko nikalta dekhoon (Pg. 323)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites