یہ کیا ہوا کہ طبیعت سنبھلتی جاتی ہے

شہریار

یہ کیا ہوا کہ طبیعت سنبھلتی جاتی ہے

شہریار

MORE BY شہریار

    یہ کیا ہوا کہ طبیعت سنبھلتی جاتی ہے

    ترے بغیر بھی یہ رات ڈھلتی جاتی ہے

    اس اک افق پہ ابھی تک ہے اعتبار مجھے

    مگر نگاہ مناظر بدلتی جاتی ہے

    چہار سمت سے گھیرا ہے تیز آندھی نے

    کسی چراغ کی لو پھر بھی جلتی جاتی ہے

    میں اپنے جسم کی سرگوشیوں کو سنتا ہوں

    ترے وصال کی ساعت نکلتی جاتی ہے

    یہ دیکھو آ گئی میرے زوال کی منزل

    میں رک گیا مری پرچھائیں چلتی جاتی ہے

    مآخذ:

    • Book: sooraj ko nikalta dekhoon (Pg. 336)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites