نہ دیواریں ہیں اور نہ در پرانا

طاہر عدیم

نہ دیواریں ہیں اور نہ در پرانا

طاہر عدیم

MORE BYطاہر عدیم

    نہ دیواریں ہیں اور نہ در پرانا

    ابھی تک پھر بھی ہے یہ گھر پرانا

    ڈرا دیتا جگا دیتا ہے مجھ کو

    درون ذہن بیٹھا ڈر پرانا

    مراحل آخری تعلیم کے ہیں

    مری ماں نے نکالا زر پرانا

    تماشا پھر وہی امسال ہوگا

    وہی دستار ہوگی سر پرانا

    سجا ماتم کنار دشت مژگاں

    سنا قصہ وہ چشم تر پرانا

    اگر ہے دسترس دست سخاوت

    ملا دے یار لمحہ بھر پرانا

    اگر آ ہی گیا ہے وہ تو طاہرؔ

    شکایت کر نہ شکوہ کر پرانا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے