نہ انتظار میں یاں آنکھ ایک آن لگی

مومن خاں مومن

نہ انتظار میں یاں آنکھ ایک آن لگی

مومن خاں مومن

MORE BYمومن خاں مومن

    نہ انتظار میں یاں آنکھ ایک آن لگی

    نہ ہائے ہائے میں تالو سے شب زبان لگی

    جلا جگر تپ غم سے پھڑکنے جان لگی

    الٰہی خیر کہ اب آگ پاس آن لگی

    گلی میں اس کی نہ پھر آتے ہم تو کیا کرتے

    طبیعت اپنی نہ جنت کے درمیان لگی

    جفائے غیر کا شکوہ تھا تیرا تھا کیا ذکر

    عبث یہ بات بری تجھ کو بد گمان لگی

    ہنسو نہ تم تو مرے حال پر میں ہوں وہ ذلیل

    کہ جس کی ذلت و خواری سے تم کو شان لگی

    کہاں وہ آہ و فغاں دم بھی لے نہیں سکتے

    ہمیں یہ تیری دعائے بد آسمان لگی

    میں اور اس کو بلاؤں گا روز وصل میں لو

    اجل بھی کرنے محبت کا امتحان لگی

    برنگ صورت بلبل نہیں نوا سنجی

    یہ کیا ہوا کہ چپ اے گلستاں بیان لگی

    سدا تمہاری طرف جی لگا ہی رہتا ہے

    تمہارے واسطے ہے دل کو مہربان لگی

    وہ کینہ توز تھا مومنؔ تو دل لگایا کیوں

    کہو تو کیا تمہیں ایسی بھلی وہ آن لگی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY