نئے لباس کو ہم تار تار کیا کرتے

اسرارالحق اسرار

نئے لباس کو ہم تار تار کیا کرتے

اسرارالحق اسرار

MORE BYاسرارالحق اسرار

    نئے لباس کو ہم تار تار کیا کرتے

    ملی تھی بھیک میں فصل بہار کیا کرتے

    ہم اپنے زخم تمنا شمار کیا کرتے

    تمام عمر یہی کاروبار کیا کرتے

    جب آفتاب کئی اپنی دسترس میں رہے

    تمہیں کہو کہ چراغوں سے پیار کیا کرتے

    ہمارے ہاتھ میں پتھر تھے پھل گرانے کو

    ہم آندھیوں کا بھلا انتظار کیا کرتے

    کبھی ہم اپنی وفاؤں سے مطمئن نہ ہوئے

    نگاہ یار تجھے شرمسار کیا کرتے

    ہمارا درد بھی کچھ تم سے مختلف تو نہ تھا

    ہم اہل ظرف تھے چیخ و پکار کیا کرتے

    انہیں بھی اپنی خوشی تھی عزیز اے اسرارؔ

    جو میرا دل نہ دکھاتے تو یار کیا کرتے

    مآخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY