نظر نظر سے ملانا کوئی مذاق نہیں

ضیا فتح آبادی

نظر نظر سے ملانا کوئی مذاق نہیں

ضیا فتح آبادی

MORE BYضیا فتح آبادی

    نظر نظر سے ملانا کوئی مذاق نہیں

    ملا کے آنکھ چرانا کوئی مذاق نہیں

    پہاڑ کاٹ تو سکتا ہے تیشۂ فرہاد

    پہاڑ سر پہ اٹھانا کوئی مذاق نہیں

    اڑانیں بھرتے رہیں لاکھ طائران خیال

    ستارے توڑ کے لانا کوئی مذاق نہیں

    لہو لہو ہے جگر داغ داغ ہے سینہ

    یہ دو دلوں کا فسانہ کوئی مذاق نہیں

    ہوائیں آج بھی آوارہ و پریشاں ہیں

    مہک گلوں کی اڑانا کوئی مذاق نہیں

    ہزاروں کروٹیں لیتے ہیں آسمان و زمیں

    گرے ہوؤں کو اٹھانا کوئی مذاق نہیں

    یہ اور بات بلائیں نہ اپنی محفل میں

    مگر ضیاؔ کو بھلانا کوئی مذاق نہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 303)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY