نمود و بود کو عاقل حباب سمجھے ہیں

میر انیس

نمود و بود کو عاقل حباب سمجھے ہیں

میر انیس

MORE BY میر انیس

    نمود و بود کو عاقل حباب سمجھے ہیں

    وہ جاگتے ہیں جو دنیا کو خواب سمجھے ہیں

    کبھی برا نہیں جانا کسی کو اپنے سوا

    ہر ایک ذرے کو ہم آفتاب سمجھے ہیں

    عجب نہیں ہے جو شیشوں میں بھر کے لے جائیں

    ان آنسوؤں کو فرشتے گلاب سمجھے ہیں

    زمانہ ایک طرح پر کبھی نہیں رہتا

    اسی کو اہل جہاں انقلاب سمجھے ہیں

    انہیں کو دار بقا کی ہے پختگی کا خیال

    جو بے ثباتی دہر خراب سمجھے ہیں

    شباب کھو کے بھی غفلت وہی ہے پیروں کو

    سحر کی نیند کو بھی شب کا خواب سمجھے ہیں

    لحد میں آئیں نکیرین آئیں بسم اللہ

    ہر اک سوال کا ہم بھی جواب سمجھے ہیں

    اگر غرور ہے اعدا کو اپنی کثرت پر

    تو اس حیات کو ہم بھی حباب سمجھے ہیں

    نہ کچھ خبر ہے حدیثوں کی ان سفیہوں کو

    نہ یہ معانی ام الکتاب سمجھے ہیں

    کبھی شقی متمتع نہ ہوں گے دنیا سے

    جسے یہ آب اسے ہم سراب سمجھے ہیں

    مزیل عقل ہے دنیا کی دولت اے منعم

    اسی کے نشے کو صوفی شراب سمجھے ہیں

    حرارتیں ہیں مآل حلاوت دنیا

    وہ زہر ہے جسے ہم شہد ناب سمجھے ہیں

    انیسؔ مخمل و دیبا سے کیا فقیروں کو

    اسی زمین کو ہم فرش خواب سمجھے ہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نمود و بود کو عاقل حباب سمجھے ہیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY