رات آنکھوں میں کاٹنے والو شاد رہو آباد رہو

خالد معین

رات آنکھوں میں کاٹنے والو شاد رہو آباد رہو

خالد معین

MORE BYخالد معین

    رات آنکھوں میں کاٹنے والو شاد رہو آباد رہو

    بار ہجر اٹھانے والو شاد رہو آباد رہو

    کچی عمر میں کل کے دکھوں سے آج الجھنا ٹھیک نہیں

    پہلا ساون بھیگنے والو شاد رہو آباد رہو

    اب آئے ہو سارے دیئے جب اک اک کر کے بجھ بھی گئے

    لیکن لوٹ کے آنے والو شاد رہو آباد رہو

    خانہ بدوشی ایک ہنر ہے رفتہ رفتہ آئے گا

    رنج مسافت کھینچنے والو شاد رہو آباد رہو

    ایک دریچے سے دو آنکھیں روز صدائیں دیتی ہیں

    رات گئے گھر لوٹنے والو شاد رہو آباد رہو

    ہجر زدوں پر خود نہیں کھلتا کس عالم میں رہتے ہیں

    حال ہمارا پوچھنے والو شاد رہو آباد رہو

    مأخذ :
    • کتاب : Ghazal Calendar-2015 (Pg. 11.05.2015)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY