رہ رہے ہیں مکیں شبوں کے

اعجاز گل

رہ رہے ہیں مکیں شبوں کے

اعجاز گل

MORE BYاعجاز گل

    رہ رہے ہیں مکیں شبوں کے

    کیا ہوئے ڈھیر سورجوں کے

    آنکھ میں خواب منجمد ہیں

    رنگ برساؤ حوصلوں کے

    خون سے طے کئے گئے ہیں

    راستے زرد موسموں کے

    مقتلوں سے اٹھائے میں نے

    پھول سے جسم دوستوں کے

    اے زمیں تیری عظمتوں میں

    بہہ گئے شہر واہموں کے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY