روز کہاں سے کوئی نیاپن اپنے آپ میں لائیں گے

بشر نواز

روز کہاں سے کوئی نیاپن اپنے آپ میں لائیں گے

بشر نواز

MORE BYبشر نواز

    روز کہاں سے کوئی نیاپن اپنے آپ میں لائیں گے

    تم بھی تنگ آ جاؤ گے اک دن ہم بھی اکتا جائیں گے

    چڑھتا دریا ایک نہ اک دن خود ہی کنارے کاٹے گا

    اپنے ہنستے چہرے کتنے طوفانوں کو چھپائیں گے

    آگ پہ چلتے چلتے اب تو یہ احساس بھی کھو بیٹھے

    کیا ہوگا زخموں کا مداوا دامن کیسے بچائیں گے

    وہ بھی کوئی ہم ہی سا معصوم گناہوں کا پتلا تھا

    ناحق اس سے لڑ بیٹھے تھے اب مل جائے منائیں گے

    اس جانب ہم اس جانب تم بیچ میں حائل ایک الاؤ

    کب تک ہم تم اپنے اپنے خوابوں کو جھلسائیں گے

    سرما کی رت کاٹ کے آنے والے پرندو یہ تو کہو

    دور دیس کو جانے والے کب تک لوٹ کے آئیں گے

    تیز ہوائیں آنکھوں میں تو ریت دکھوں کی بھر ہی گئیں

    جلتے لمحے رفتہ رفتہ دل کو بھی جھلسائیں گے

    محفل محفل اپنا تعلق آج ہے اک موضوع سخن

    کل تک ترک تعلق کے بھی افسانے بن جائیں گے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY