سانسوں کی روانی میں خلل آنے لگا ہے

بابر علی اسد

سانسوں کی روانی میں خلل آنے لگا ہے

بابر علی اسد

MORE BYبابر علی اسد

    سانسوں کی روانی میں خلل آنے لگا ہے

    ٹھہرو کہ بچھڑ جانے کا پل آنے لگا ہے

    کہتے ہو تو لہجے کی کمر سیدھی نہ کر لوں

    مانا کہ مرے عجز پہ پھل آنے لگا ہے

    یہ کیا کہ ہر اک وقت کی بیزار سماعت

    ہر لفظ کی پیشانی پہ بل آنے لگا ہے

    لاؤ مری آواز کی دستار اٹھا کر

    کم ظرف کوئی حد سے نکل آنے لگا ہے

    لو ختم ہوئی عمر مہ و سال کی گنتی

    تمہید تھی جس کی وہی کل آنے لگا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY