شادی و الم سب سے حاصل ہے سبکدوشی

بیدم شاہ وارثی

شادی و الم سب سے حاصل ہے سبکدوشی

بیدم شاہ وارثی

MORE BYبیدم شاہ وارثی

    شادی و الم سب سے حاصل ہے سبکدوشی

    سو ہوش مرے صدقے تجھ پر مری بے ہوشی

    گم ہونے کو پا جانا کہتے ہیں محبت میں

    اور یاد کا رکھا ہے یاں نام فراموشی

    کل غیر کے دھوکے میں وہ عید ملے ہم سے

    کھولی بھی تو دشمن نے تقدیر ہم آغوشی

    وہ قلقل مینا میں چرچے مری توبہ کے

    اور شیشہ و ساغر کی مے خانے میں سرگوشی

    ہم رنج بھی پانے پر ممنون ہی ہوتے ہیں

    ہم سے تو نہیں ممکن احسان فراموشی

    ہوش آتا ہے پھر مجھ کو پھر ہوش مجھے آیا

    دینا نگہ ساقی اک ساغر بے ہوشی

    کل عرصۂ محشر میں جب عیب کھلیں میرے

    رحمت تری پھیلا دے دامان خطا پوشی

    ملتے ہی نظر تجھ سے مستانہ ہوا بیدمؔ

    ساقی تری آنکھیں ہیں یا ساغر بے ہوشی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے