شیخ حرم اس بت کا پرستار ہوا ہے

راسخ عظیم آبادی

شیخ حرم اس بت کا پرستار ہوا ہے

راسخ عظیم آبادی

MORE BYراسخ عظیم آبادی

    شیخ حرم اس بت کا پرستار ہوا ہے

    بت خانہ نشیں باندھ کے زنار ہوا ہے

    ہر حرف پہ دو آنسو ٹپک پڑتے ہیں اے وائے

    خط یار کو لکھنا ہمیں دشوار ہوا ہے

    کوتہ نہ سمجھ آہ ضعیفان کو یہ تیر

    سو بار دل عرش سے بھی پار ہوا ہے

    اے صید فگن غم سے ترے دوری کہ میرا

    ہر زخم دل اک دیدۂ خوں بار ہوا ہے

    ہستی تری پردہ ہے اٹھا دے اسے غافل

    کیوں ایسا حجاب رخ دل دار ہوا ہے

    آگے ترے تھی گرم سخن ہونے کی حسرت

    سو بھرنا دم سرد بھی دشوار ہوا ہے

    کر قدر تو راسخؔ کی کہ اس طرح کا آزاد

    یوں دام میں آ تیرے گرفتار ہوا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY