شکستہ چھت میں پرندوں کو جب ٹھکانہ ملا

سنجے مصرا شوق

شکستہ چھت میں پرندوں کو جب ٹھکانہ ملا

سنجے مصرا شوق

MORE BYسنجے مصرا شوق

    شکستہ چھت میں پرندوں کو جب ٹھکانہ ملا

    میں خوش ہوا کہ مرے گھر کو بھی گھرانا ملا

    فلک پہ اڑتے ہوئے بھی نظر زمیں پہ رہی

    مزاج مجھ کو مقدر سے طائرانہ ملا

    ہم اس کے حسن سخن کی دلیل کیا دیں گے

    وہ جتنی بار ملا ہم سے برملا نہ ملا

    اب آ گیا ہے تو چپ چاپ خامشی کو سن

    مرے سکوت میں اپنی کوئی صدا نہ ملا

    لڑی سی ٹوٹ کے آنکھوں سے گر پڑی اے شوقؔ

    لبوں سے حرف کا کوئی بھی سلسلہ نہ ملا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY