شورش حرف ہے ایاغ میں کچھ

قمر عباس قمر

شورش حرف ہے ایاغ میں کچھ

قمر عباس قمر

MORE BYقمر عباس قمر

    شورش حرف ہے ایاغ میں کچھ

    لکھ قلم منزل بلاغ میں کچھ

    دیکھے جاتا ہے وہ قدم کے نشاں

    مل گیا ہے اسے سراغ میں کچھ

    آفتاب اور یہ سیہ خانہ

    تو نے دیکھا ہے دل کے داغ میں کچھ

    ساری دنیا کو مار دی ٹھوکر

    آ گیا تھا مرے دماغ میں کچھ

    ذکر باغ نعیم ہے واللہ

    لطف آنے لگا فراغ میں کچھ

    بجھ رہا ہے افق پہ اب سورج

    آپ رکھ دیجیے چراغ میں کچھ

    اے قمرؔ آنکھ سے اتر دل میں

    ضو فشانی ہو دل کے باغ میں کچھ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY