تیرا ہر غم چرا لیا ہوتا

بینا گوئندی

تیرا ہر غم چرا لیا ہوتا

بینا گوئندی

MORE BYبینا گوئندی

    تیرا ہر غم چرا لیا ہوتا

    کاش میرا پتا لیا ہوتا

    زندگی دھوپ میں گزاری ہے

    سائے میں ہی چھپا لیا ہوتا

    کچھ تو کم ہوتے شب کے اندھیارے

    دل کا دیپک جلا لیا ہوتا

    یا سمندر کی تہ میں رکھ آتے

    یا بھنور سے بچا لیا ہوتا

    چل دئے میرے مسکرانے پر

    پردۂ گل ہٹا لیا ہوتا

    اشک بیناؔ بکھر ہی جاتا ہے

    تو نے موتی بنا لیا ہوتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY